Note for Contributors

Authors are entitled to 2 free copies of the issue in which their articles appear.

Article should be typed in font Times New Roman, size 12.

Three hard copies of the Article should be submitted in double space throughout including notes with ample margins. Pages, including those containing instructions, diagrams or tables should be numbered consecutively.

Article should also be submitted through email in the typed script and subject of the Email should be labeled with; “Article for ZABAN O ADAB”.

The article should confirm the Journal style outline below any figures and tables must be clearly produced ready for photographic reproduction. The source should be given below the table.

Each article should be submitted with an abstract of maximum 200 words in length.

Writing Style

The name of the author should appear at the top of the first page, with title underneath. The authors name with institutional affiliation should appear at the bottom of the first page of the text.

References should be given in the text in the author/date style, i.e. “Smith (1988) argues…….” Or as “……various authors argue (Smith 1988. Chandler 1991)….”.

مقالہ نگاروں کے لیے ہدایات
تحقیقی مجلہ زبان و ادب سال میں دو بارشائع ہوتا ہے۔شمارے میں شامل ہر مقالہ نگار کو شمارے کی ایک اعزازی کاپی اس کے پتے پر ارسال کی جاتی ہے۔ زبان و ادب کےلیے مقالہ ارسال کرتے ہوئے درج ذیل اصولوں کی پیروی لازمی ہے۔
1۔ مقالہ نگار کی اپنی تحقیق اور واضح نتائج پر مشتمل ہو نا چاہیے۔
2۔ایسا مقالہ اشاعت کے لیے نہ روانہ کیا جائے جو کسی اور تحقیقی مجلے میں بھی اشاعت کے لیے بھیجا جا چکا ہو۔
3۔مقالے کو جمیل نوری نستعلیق فونٹ سائز12کمپوز کرا کر بذریعہ ای میل بھیجا جائے۔
4۔مقالے کی تین عدد ہارڈ کاپیز بھی کمپوز کرا کر روانہ کی جائیں۔
5۔مقالے میں شامل جدول اور تصاویر واضح ہو نی چاہیے تاکہ انکا دوبارہ عکس باسانی لیا جا سکے۔
6۔ مقا لے کے صفحہ اول پر دائیں طرف مقالہ نگار کے نام کے بعدعنوان مقالہ اس کے بعد انگریزی اور اردو دونوں زبانوں میں ملخص (زیادہ سے زیادہ دو سو الفاظ پر مشتمل ہو) ہونا چاہیے۔اسی صفحہ کی آخری سطر میں مقالہ نگار کا عہدہ اور ادارے کا نام درج کیا جائے
7۔ تمام حوالوں کی تفصیل مقالے کے اختتام پر دی جائےاور متن میں حوالوں کے اندراج سے گریز کیا جائے۔ ضرورتا ایضا بھی تحریر کیا جائے۔مقالے کے آخر میں تمام مآخذ یا حوالوں کی تفصیل درج کرتے ہوئے درج ذیل ترتیب کو ملحوظ رکھا جائے:
ا۔ کتاب کا اندارج کرناہو تو :
مصنف کا نام، عنوان کتاب، ناشر، سن ، صفحہ نمبر
ب۔ مجموعہ مقالات /مجلہ کا اندراج کرنا ہو تو:
محقق کا نام،عنوان مضمون، جس کتاب یا مجلہ میں شامل ہو اس کا نام، مرتب کا نام،ناشر، سن ، صفحہ نمبر
ج۔ انٹر نیٹ/ آن لائن دستاویز کا اندراج کرنا ہو تو:
https://rekhta.org/ebooks/she-r-e-shor-angez-volume-001-shamsur-rahman-faruqi-ebooks
(مورخہ: ٢٥نومبر٢۰۰۷ء )